Best Offer

Tag Archives: غزل

غزل: دھندلا چکا ہے آئینہ اعتبار بھی

ازقلم: مختار تلہری زینت ہے گلستاں کی خزاں بھی بہار بھیشاخوں سے لپٹے رہتے ہیں گل اورخار بھی کیسے یقیں کا چہرہ نظر صاف آ سکےدھندلا چکا ہے آئینۂِ عتبار بھی ایسا نہیں کہ صرف گریباں ہوا ہو چاکدیکھا ہے میں نے دامنِ دل تار تار بھی میں تو ہوا …

Read More »

غزل: کسی جل پری کے آنچل سے کماں بنا رہےہیں

مہیب الرحمٰن وفاؔکاؤنسلنگ انجینئر، ایوڈا ضلع امراوتی مہاراشٹرا سر آسماں وہ بادل جو دھنک سجا رہےہیںکسی جل پری کے آنچل سے کماں بنا رہےہیں کبھی جھرنوں کے ترنم کو سنوتو یوں لگے گاوہ سریلی لے میں میری یہ غزل سنا رہےہیں بڑی دل کو بھا رہی ہیں یہ گھٹائیں کالی …

Read More »

غزل: نادانی مری

مہیب الرحمٰن وفاؔکاؤنسلنگ انجینئر، ایوڈا، امراوتی مہاراشٹرا میٹھے رسیلےخوشنما پھل جیسی ہے بانی مرییوں ہی نہیں اے دوستو دنیا ہے دیونانی مری آنگن میں ہے روٹھی ہوئ کیوں رات کی رانی مریکس موڑ پر لے آئی ہے اک مجھکو نادانی مری میں اپنوں کو دشمن کی صف میں دیکھ کر …

Read More »