Best Offer

مجھے وہ بہت یاد آتی ہے ہولی

نتیجہ فکر: ذکی طارق بارہ بنکوی
سعادت گنج،بارہ بنکی،یوپی

جوبچھڑے ہیں ان کو ملاتی ہے ہولی
نہ پوچھو کہ کتنی صفاتی ہے ہولی

بہت سارے رنگوں سے رنگی ہوئی یہ
ہمیں ایک ہونا سکھاتی ہے ہولی

جو نفرت اور الگاؤ کے ہیں پجاری
انھیں دیکھو کیسی چڑھاتی ہے ہولی

دھنک افشاں پچکاریوں سے بہر سو
زمیں کو گگن سا بناتی ہے ہولی

جو میں نے ترے ساتھ کھیلی تھی ہمدم
مجھے وہ بہت یاد آتی ہے ہولی

سدا کے لئے کاش ہوجائیں قائم
جو اکتا کے منظر دکھاتی ہے ہولی

جو قلبی سکوں اس میں پنہاں نہیں تو
یونہی کیا یہ خلقت مناتی ہے ہولی

یقیں مان بن تیرے اے جانِ جاناں
مجھے شدتوں سے ستاتی ہے ہولی

اگر مجھ سے روٹھے ہیں تو جانِ محفل
چلے آئیے کہ بلاتی ہے ہولی

"ذکی” ہنستی اور کھیلتی ٹولیوں میں
سمائی ہوئی کیا لبھاتی ہے ہولی